بینک دولت پاکستان کی ڈپٹی گورنر محترمہ سیما کامل نے بدھ کو کراچی میں زرعی قرضوں پر مشاورتی کمیٹی (اے سی اے سی)کے فالو اپ اجلاس کی صدارت کی۔ کمیٹی نے دسمبر 2020 کے اپنے آخری اجلاس میں جو اہم فیصلے کیے تھے ان پر پیش رفت کا جائزہ لیا اور جولائی تا اپریل (مالی سال 22) میں زرعی قرضے کے حوالے سے کارکردگی پر غور کیا۔

ڈپٹی گورنر نے کمیٹی کے مختلف فیصلوں پر عمل درآمد میں تمام متعلقہ فریقوں کی کوششوں کو سراہتے ہوئے بینکوں پر زور دیا کہ وہ اسٹیٹ بینک کے حالیہ اقدامات کا فائدہ اٹھائیں اور زرعی قرضے بڑھانے کی اپنی کوششیں تیز کریں اور بالخصوص نظرانداز کیے گئے علاقوں میں اپنی رسائی بڑھائیں۔اسٹیٹ بینک نے بینکوں کی کارکردگی ناپنے کے لیے زرعی قرضوں کا جو نوتشکیل شدہ اسکورنگ ماڈل اپنایا ہے، اجلاس میں اس کا جائزہ لیا اور اس ماڈل کے مارچ 2022 تک کے نتائج پر نظر ڈالی۔

زرعی قرضوں کی مجموعی کارکردگی کو اجاگر کرتے ہوئے محترمہ سیما کامل نے جولائی تا اپریل (مالی سال22) میں 1,059 ارب روپے تقسیم کرنے کے سلسلے میں بینکوں کی کوششوں کو سراہا، جو سال کے مقررہ ہدف 1.7 ٹریلین روپے کا 63 فیصد ہے۔ تاہم، انہوں نے گذشتہ برس کی اسی مدت میں 1,074 ارب روپے کے قرضوں کی تقسیم کے مقابلے میں زرعی قرضوں کی تقسیم میں 1.4 فیصد کمی اور قدرے سست کارکردگی پر تشویش ظاہر کی، اور اس کا سبب بعض اہم کمرشل اور تخصیصی بینکوں کی کارکردگی میں سست رفتاری کو قرار دیا۔

درمیانے حجم کے کمرشل بینکوں، اسلامی بینکوں اور مائکروفنانس بینکوں اور اداروں کی کارکردگی گذشتہ برس سے بہتر ہوئی ہے۔چیئرپرسن نے مالی سہولتوں سے محروم تمام شعبوں میں زرعی قرضوں کی صوبائی تقسیم میں نمو کو سراہا۔ قرضوں کی تقسیم میں جولائی تا اپریل (مالی سال21) کے مقابلے میں جولائی تا اپریل (مالی سال22) میں بلوچستان میں 73 فیصد اضافہ ہوا، جبکہ گلگت بلتستان میں 55 فیصد، آزاد جموں و کشمیر میں 43 فیصد، سندھ میں 23 فیصد اور خیبرپختونخوا میں 17 فیصد اضافہ درج کیا گیا۔

چیئرپرسن نے کہا کہ یہ بہتری چیمپئن بینک ماڈل سمیت بعض اقدامات کا نتیجہ تھی، جسے اسی کمیٹی کے گذشتہ اجلاس میں اختیار کیا گیا تھا۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ دسمبر 2021 میں زرعی قرضوں پر مشاورتی کمیٹی نے چیمپئن بینک ماڈل کے تحت چھ بینکوں کو کم مالی خدمات والے نشان زد صوبوں/علاقوں کے لیے چیمپئنز کے طور پر نامزد کیا تھا، جس میں یہ شامل ہیں: (i) بلوچستان کے لیے ایچ بی ایل، (ii) گلگت بلتستان کے لیے ایچ بی ایل مائیکروفنانس بینک، (iii) آزاد جموں و کشمیر کے لیے این بی پی، (iv) خیبرپختونخوا کے لیے بینک آف خیبر، (v) سندھ کے لیے یو بی ایل اور (vi) جنوبی پنجاب کے لیے بینک آف پنجاب۔

چھ چیمپئن بینکوں نے کمیٹی کو اس اقدام کے تحت اپنے مقررہ علاقوں میں انجام دی جانے والی سرگرمیوں سے آگاہ کیا، اور حالیہ پیش رفت اور مستقبل کا لائحہ عمل پیش کیا۔ محترمہ سیما کامل نے چیمپئن بینکوں کی کوششوں کی تعریف کرتے ہوئیان پر زور دیا کہ وہ مطلوبہ مقاصد کے حصول کے لیے اپنی بہترین کوششوں کو بروئے کار لائیں۔کمیٹی کا گذشتہ اجلاس میں ایک اور اہم فیصلہ یہ تھا کہ گودام کی برقی رسید سے قرضہ (الیکٹرانک ویئر ہاس رسیٹ فنانسنگ)کے فروغ کے لیے حکمت عملی تیار کی جائے ۔

شرکا کو بتایا گیا کہ اس اسکیم کی تفہیمی حکمتِ عملی تیار کر لی گئی ہے اور اس کے بعض اقدامات پر عمل کر لیا گیا ہے جن میں متعلقہ ٹاسک فورس کا قیام، رہن کی انتظامی کمپنی کے ساتھ بینکوں کے سروس کے معاہدوں پر دستخط، بینکوں کو اسکیم کے اہداف دینا، متعلقہ فریقوں کی استعداد کار میں اضافہ او ردیگر اقدامات شامل ہیں۔بعد ازاں، پاکستان بینکس ایسوسی ایشن کے نمائندے نے ماحول سے مطابقت کے زرعی قرضے کو فروغ دینے کی حکمت عملی بھی پیش کی ، جس میں کاشت کاروں اور بینکاروں میں آگاہی پیدا کرنے پر زور دیا گیا، اور اس زمرے میں بینکوں کی پیش کردہ موجودہ مصنوعات بڑھانے کی تجویز پیش کی گئی۔

اجلاس میں کمرشل بینکوں کے صدور/سی ای اوز اور کمرشل بینکوں کی زرعی قرضے کی ٹیموں اور اسٹیٹ بینک کے عہدیداران نے شرکت کی۔ اجلاس کے اختتام پر چیئرپرسن کا شکریہ ادا کیاگیا۔

By admin

Leave a Reply

Your email address will not be published.