پاکستان ہائی ٹیک ہائبرڈ سیڈ ایسوسی ایشن (پی ایچ ایچ ایس اے)کے چیئرمین شہزاد علی ملک نے کہا ہے کہ ہر قسم کے بیجوں پر 17 فیصد سیلز ٹیکس واپس لینے سے کاشتکاروں اور زمینداروں کو ہائی ٹیک ہائبرڈ بیج استعمال کرنے کی ترغیب ملے گی اور وہ دو سے تین گنا فصل حاصل کر سکیں گے۔ اتوار کو یہاں اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے وزیر اعظم محمدشہباز شریف، وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل، وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری، گورنر پنجاب بلیغ الرحمان اور وفاقی وزیر فوڈ سکیورٹی کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے اپنے اپنے دائرہ اثر کو بروئے کار لاتے ہوئے سیلز ٹیکس کی واپسی میں کردار ادا کیا۔انہوں نے کہا کہ بیجوں پر بلاجواز سیلز ٹیکس واپس لینے سے زرعی پیداوار میں کئی گنا اضافہ ہو گا اور بڑھتی ہوئی آبادی کی غذائی ضروریات کو پورا کیا جا سکے گا۔

انہوں نے کہا کہ زراعت کا شعبہ ملک کی اقتصادی ترقی، غذائی تحفظ، روزگار کی فراہمی اور غربت کے خاتمے کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل ہے خاص طور پر دیہی سطح پر اس کا جی ڈی پی میں حصہ20 فیصد ہے اور یہ40 فیصد افرادی قوت کو روزگار فراہم کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ چاول کی فصل پاکستان کی زرعی معیشت میں متعدد حوالوں سے انتہائی اہم ہے جو پاکستان میں بڑی فصلوں میں دوسرے نمبر پر ہے ، ویلیو ایڈڈ شعبے میں اس کا حصہ 4 فیصد ہے اور ساتھ ہی یہ زرمبادلہ کا بڑا ذریعہ ہے۔ان کا کہنا تھا کہ زراعت پاکستان کی معیشت کا بنیادی محور ہے اور آبادی کی اکثریت کا بالواسطہ یا بلاواسطہ انحصار اس پر ہے۔

شہزاد علی ملک نے کہا کہ ہائی ٹیک ہائبرڈ سیڈ ٹیکنالوجی نے کاشتکاری میں انقلاب برپا کر دیا ہے، خاص طور پر چاول کے کاشتکار اس کے استعمال سے بہترین پیداوار حاصل کر سکتے ہیں جس کے بدلے میں نہ صرف ان کے منافع میں اضافہ ہوگا بلکہ برآمدات کو بھی فروغ ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ بیج پر سیلز ٹیکس کی واپسی کی خبر سے کسانوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی ہے۔

By admin

Leave a Reply

Your email address will not be published.