ڈائریکٹر جنرل زراعت توسیع ونگ جان محمد کی خصوصی ہدایت پر محکمہ زراعت توسیع ونگ نے ضلع پشاور اور مردان میں ضلعی انتظامیہ کے ہمراہ الگ الگ چھاپوں کے دوران متعداد دکانداروں کو گرفتار اوربعض دکانداروں کو موقع پر پر بھاری جرمانے کئے ۔پشاور میں توسیع ونگ اور ضلعی انتظامیہ نے مشترکہ کارروائی کرتے ہوئے متعداد دکانداروں کو کھاد کی اضافی قیمت پر فروخت کرنے اور باقاعدہ ریکارڈ نہ رکھنے پر گرفتار کرکے انکی دکانوں کو قانونی طور پر سیل کردیا ۔

اتوار کے دن محکمہ زراعت توسیع ضلع پشاور اور اسسٹنٹ کمشنر متنی نے مشترکہ کارروائی کے دوران تین دکانیں سیل اور دکانداروں کو گرفتار کیا ۔آپریشن اور چھاپے ڈپٹی ڈائریکٹر سبجیکٹ میٹر سپشلسٹ پلانٹ پروٹیکشن ڈاکٹر حافظ فرہاد علی اور اسسٹنٹ کمشنر متنی ایریا نادیہ نواز ڈوگر اور متنی ایریا سرکل ایگریکلچر آفیسر افتخار احمد اور فیلڈ اسسٹنٹ احمد شاہ نے مشترکہ طور پر بڈھ بیر ایریا میں مارے جس کے نتیجے میں تین دکانداروں کو جو کھاد کے کاروبار سے وابستہ ہیں کو باقاعدہ ریکارڈ نہ رکھنے اور گاہک سے کھاد کی حکومت کے مقررہ نرخ سے زیادہ قیمت وصول کرنے پر ان کی دکانوں کو سیل کردیا اور تینوں دکانداروں کو موقع پر گرفتار کیا۔

ڈاکٹر حافظ فرہاد علی کا کہنا ہے کہ محکمہ زراعت اور انتظامیہ کی مشترکہ کاروائیاں اس وقت تک جاری رہیں گی جب تک زمینداروں کو حکومت کی طرف سے مقررہ قیمت اور با آسانی کھاد/فرٹیلائزر دستیاب نہ ہو۔ انہوں نے تمام کاروباری حضرات کو خبردار کیا کہ وہ اپنا ریکارڈ برقرار رکھیں اور حکومت کی طرف سے مقررہ قیمت/ نرخ پر کھاد فروخت کیا کریں بصورت دیگر انکے خلاف قانونی کارراوئی ہوتی رہے گی اسی طرح ضلعی انتظامیہ مردان اور محکمہ زراعت نے کھاد ڈیلران کے خلاف مشترکہ کارروائی کی اسسٹنٹ کمشنر جنید خان ایگریکلچر آفیسر ڈاکٹر جان محمد اور فیلڈ سٹاف ذیشان اختر نے پار ہوتی بازار میں اچانک چھاپہ مارا جس میں کھاد ڈیلرز کو یوریا کے حکومتی منظور شدہ ریٹ کی خلاف ورزی کرنے پر موقع پر ہی 2دکانداروں کو 50، 50 ہزار روپے جرمانہ کیا، اے سی کی طرف سے دونوں کو تنبیہ کی گئی کہ وہ یوریا کھاد زیادہ قیمتوں پر فروخت کرنے سے گریز کریں اور اگر انہوں نے دوبارہ یہ جرم کیا تو اُنکا پورا کاروبار سیل کر دیا جائے گا، اُنکی تمام کھاد کمپنیوں کے ساتھ ڈیلرشپ منسوخ کر دی جائیگی اور ڈیلرشپ دوسرے دیانتدار اشخاص کو دی جائے گی، اُنہیں اس جرم کی سزا میں جیل بھیج دیا جائے گا اور کوئی رعایت نہیں کی جائے گی۔

انہوں نے دوسرے ڈیلرز کا ریکارڈ بھی چیک کیا۔ اے سی جنید خان اور زراعت آفیسر ڈاکٹر جان محمد خان نے ڈیلران کو ہدایت کی کہ وہ حکومت کی طرف سے منظور شدہ کھادوں کا نرخ نامہ آویزاں کریں اور کھادوں کی فروخت کھلے عام عوامی سطح پر کی جائے گی۔

By admin

Leave a Reply

Your email address will not be published.