December 3, 2021

پاکستان میں گائیوں کی 3کروڑ 97لاکھ، بھینسوں کی 3کروڑ 54لاکھ، بھیڑوں کی 3 کروڑ 93لاکھ، بکریوں کی 6کروڑ53لاکھ، اونٹوں کی تعداد11 لاکھ تک پہنچ گئی

فیصل آباد پاکستان میں گائیوں کی تعداد 3کروڑ 97لاکھ، بھینسوں کی تعداد 3کروڑ 54لاکھ، بھیڑوں کی 3 کروڑ 93لاکھ، بکریوں کی 6کروڑ 53لاکھ، اونٹوں کی تعداد 11لاکھ تک پہنچ گئی ہے جبکہ دودھ کی پیداوار 63912 ہزارٹن، بڑے گوشت کی 2232 ہزار ٹن، چھوٹے گوشت کی 747ہزار ٹن، مرغی کے گوشت کی پیداوار941 ہزار ٹن سے  تجاوز کر گئی ہے جس میں جدید ٹیکنالوجی سے استفادہ کرتے ہوئے مزید اضافہ بھی کیا جاسکتاہے۔

ڈائریکٹوریٹ آف محکمہ لائیو سٹاک و ڈیری ڈویلپمنٹ کے ترجمان نے بتایاکہ اس وقت لائیو سٹاک سیکٹر کا ملکی پیداوار میں حصہ تقریباً12 فیصد اور زراعت کی مجموعی پیداوار ساڑھے 55 فیصد ہے۔ انہوں نے بتایاکہ اس وقت پنجاب سمیت ملک کی 4کروڑ کے قریب دیہی آبادی لائیو سٹاک سیکٹر سے منسلک ہے اور اپنی 35 سے 40 فیصد تک آمدنی گوشت و دودھ کے کاروبار سے حاصل کرتی ہے۔

انہوں نے بتایاکہ ملکی آبادی میں اضافہ کے ساتھ ساتھ دودھ و گوشت کی پیداوار میں اضافہ کرنا  بھی غذائی ضروریات کے حوالے سے انتہائی اہمیت اختیار کر چکاہے۔ انہوں نے کہاکہ انسانی زندگی کو متوازن خوراک کے طور پر حیوانی لحمیات، چکنائی، حیاتین اور نمکیات کے علاوہ نباتاتی لحمیات کی بھی ضرورت ہوتی ہے جسے دودھ، دہی، مکھن، گھی، انڈے، گوشت اور  دالوں کے ذریعے پورا کیاجاتاہے۔ انہوں نے بتایاکہ وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر حکومت لائیو سٹاک سیکٹر کے شعبہ کو خصوصی اہمیت دے رہی ہے جس کے پاکستان کی معیشت پر بھی انتہائی مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔